sad ghazal shayari- love sad ghazals

0
274

ﺭﺍﺕ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻠﯽ ﭘﻠﮑﻮﮞ ﭘﮯ ﺟﮕﻨﻮ ﺁﺋﮯ

ﺭﺍﺕ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻠﯽ ﭘﻠﮑﻮﮞ ﭘﮯ ﺟﮕﻨﻮ ﺁﺋﮯ
ﮨﻢ ﮨﻮﺍﺅﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺟﺎ ﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﭼﮭﻮ ﺁﺋﮯ
ﺍﺳﮑﺎ ﺩﻝ ،ﺩﻝ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﺎ ﮐﻠﯿﺠﮧ ﮨﻮﮔﺎ
ﺟﺴﮑﻮ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﺎ ﮨﻨﺮ، ﺁﻧﺴﻮ ﮐﺎ ﺟﺎﺩﻭ ﺁﺋﮯ
ﺑﺲ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﯿﺴﯽ ﻣﮩﮏ
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﺎﺅﮞ ﺗﯿﺮﯼ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺁﺋﮯ
ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﮨﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﻭﻋﺪﮮ
ﭘﮭﻮﻝ ﮐﺎﻏﺬ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺎﻧﭻ ﮐﮯ ﺑﺎﺯﻭ ﺁﺋﮯ
ﺍﺱ ﻧﮯ ﭼﮭﻮ ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﮭﺮ ﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯿﺎ
ﻣﺪﺗﻮﮞ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮ ﺁﺋﮯ
ﺁﮒ ﻟﮩﺮﺍ ﮐﮯ ﭼﻞ ﺭﮨﮯ ﺳﮯ ﺁﻧﭽﻞ ﮐﺮ ﺩﻭ
ﺗﻢ ﻣﺠﮫ ﺭﺍﺕ ﮐﺎ ﺟﻠﺘﺎ ﮨﻮ ﺟﻨﮕﻞ ﮐﺮﺩﻭ
ﭼﺎﻧﺪ ﺳﺎ ﻣﺼﺮﻉ ﺍﮐﯿﻼ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺎﻏﺬ ﭘﺮ
ﭼﮭﺖ ﭘﮯ ﺁ ﺟﺎﻭ ،ﻣﯿﺮﺍ ﺷﻌﺮ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺮ ﺩﻭ
ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﮐﺎ ﮨﻨﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ
ﺍﺏ ﺍﺳﮯ ﺩﮬﻮﭖ ﺑﻨﺎ ﺩﻭ، ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺎﺩﻝ ﮐﺮﺩﻭ
ﺍﭘﻨﮯ ﺁﻧﮕﮭﻦ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﺳﯽ ﺳﮯ ﺫﺭﺍ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻭ
ﻧﯿﻢ ﮐﮯ ﺳﻮﮐﮭﮯﮨﻮﺋﮯ ﭘﯿﮍ ﮐﻮ ﺻﻨﺪﻝ ﮐﺮ ﺩﻭ
ﺗﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ ﺗﻮ ﻣﺮ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ
ﯾﻮﮞ ﮐﺮﻭ، ﺟﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺎﮔﻞ ﮐﺮ ﺩﻭ

_______________

ﮨﮯﻋﺠﯿﺐ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻧﮧ ﺳﻔﺮ ﺭﮨﺎ ﻧﮧ ﻗﯿﺎﻡ ﮨﮯ

ﮨﮯﻋﺠﯿﺐ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻧﮧ ﺳﻔﺮ ﺭﮨﺎ ﻧﮧ ﻗﯿﺎﻡ ﮨﮯ
ﮐﮩﯿﮟ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﺳﯽ ﺩﻭﭘﮩﺮ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﺪ ﻣﺰﺍﺝ ﺳﯽ ﺷﺎﻡ ﮨﮯ
ﯾﻮﻧﮩﯽ ﺭﻭﺯ ﻣﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺁﺭﺯﻭ ﺑﮍﯼ ﺭﮐﮫ ﺭﮐﮭﺎﺅ ﮐﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ
ﯾﮧ ﺷﺮﺍﻓﺘﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮯ ﻏﺮﺽ ﺍﺳﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ
ﮐﮩﺎﮞ ﺍﺏ ﺩﻋﺎﺅﮞ ﮐﯽ ﺑﺮﮐﺘﯿﮟ ﻭﮦ ﻧﺼﯿﺤﺘﯿﮟ ﻭﮦ ﮨﺪﺍﯾﺘﯿﮟ
ﯾﮧ ﻣﻄﺎﻟﺒﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﻠﻮﺹ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺿﺮﻭﺭﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﻼﻡ ﮨﮯ
ﻭﮦ ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﮒ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﻣﯿﮟ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﮒ ﺑﺠﮭﺎﺅﮞ ﮔﺎ
ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻡ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﻡ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ
ﻧﮧ ﺍﺩﺍﺱ ﮨﻮ ﻧﮧ ﻣﻼﻝ ﮐﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﻧﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺮ
ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻝ ﺑﻌﺪ ﻣﻠﮯ ﮨﯿﮟ ﮨﻢ ﺗﺮﮮ ﻧﺎﻡ ﺁﺝ ﮐﯽ ﺷﺎﻡ ﮨﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻐﻤﮧ ﺩﮬﻮﭖ ﮐﮯ ﮔﺎﺅﮞ ﺳﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻐﻤﮧ ﺷﺎﻡ ﮐﯽ ﭼﮭﺎﺅﮞ ﺳﺎ
ﺫﺭﺍ ﺍﻥ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﻨﺎ ﯾﮧ ﮐﻼﻡ ﮐﺲ ﮐﺎ ﮐﻼﻡ ﮨﮯ

________________

ﮐﺐ ﺗﮏ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﯿﺮ ﻣﻨﺎﺋﯿﮟ، ﮐﺐ ﺗﮏ ﺭﮦ ﺩﮐﮭﻼﺅ ﮔﮯ

ﮐﺐ ﺗﮏ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﯿﺮ ﻣﻨﺎﺋﯿﮟ، ﮐﺐ ﺗﮏ ﺭﮦ ﺩﮐﮭﻼﺅ ﮔﮯ
ﮐﺐ ﺗﮏ ﭼﯿﻦ ﮐﯽ ﻣﮩﻠﺖ ﺩﻭ ﮔﮯ، ﮐﺐ ﺗﮏ ﯾﺎﺩ ﻧﮧ ﺁﺅ ﮔﮯ
ﺑﯿﺘﺎ ﺩﯾﺪ ﺍُﻣﯿﺪ ﮐﺎ ﻣﻮﺳﻢ، ﺧﺎﮎ ﺍُﮌﺗﯽ ﮨﮯ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﮐﺐ ﺑﮭﯿﺠﻮ ﮔﮯ ﺩﺭﺩ ﮐﺎ ﺑﺎﺩﻝ، ﮐﺐ ﺑﺮﮐﮭﺎ ﺑﺮﺳﺎﺅ ﮔﮯ
ﻋﮩﺪِ ﻭﻓﺎ ﯾﺎ ﺗﺮﮎِ ﻣﺤﺒﺖ، ﺟﻮ ﭼﺎﮨﻮ ﺳﻮ ﺁﭖ ﮐﺮﻭ
ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ، ﮨﻢ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﻨﻮﺍﺅ ﮔﮯ
ﮐﺲ ﻧﮯ ﻭﺻﻞ ﮐﺎ ﺳﻮﺭﺝ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﮐﺲ ﭘﺮ ﮨﺠﺮ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ ﮈﮬﻠﯽ
ﮔﯿﺴﻮﺅﮞ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮﻥ ﺗﮭﮯ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﮯ، ﺍﻥ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﺟﺘﻼﺅ ﮔﮯ
ﻓﯿﺾ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﮒ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮔﮭﺮ ﺑﮭﺮﻧﺎ ﺑﮭﯽ، ﻟُﭧ ﺟﺎﻧﺎ ﺑﮭﯽ
ﺗﻢ ﺍﺱ ﺣﺴﻦ ﮐﮯ ﻟﻄﻒ ﻭ ﮐﺮﻡ ﭘﮧ ﮐﺘﻨﮯ ﺩﻥ ﺍﺗﺮﺍﺅ ﮔﮯ

____________________________

“انتظار”.!!!!!😌😕💔

اگر کبھی کوئی مجھ سے پوچھے کہ تم نے زندگی میں سب سے زیادہ کیا کیا..؟
تو میں بغیر رُکے کہوں
“انتظار”.!!!!!😌😕💔
کبھی کسی اچھے لمحے کے ٹھہر جانے کا۔💐
کبھی کسی دعا کی قبولیت کا۔۔💫
کبھی کسی کا میری محبت میں مبتلا ہو جانے کا۔💔🍁
اور کبھی
کسی بہت اپنے کے لوٹ آنے کا!!🍂🍀

_________________________

میرے خیال 💫🥀
🌼کہتے ہیں کہ “توجہ” اگر پتھر کو بھی دی جائے تو،،، وہ بھی نکھر جاتا ہے۔۔۔ ہر وہ چیز پھلنے پھولنے لگتی ہے،،،

جِسے تھوڑی سی بھی “توجہ” ملے۔۔۔ انسان، حیوان، چرند، پرند سب آپ کے تابع ہونے لگتے ہیں۔۔۔

آپ کی تھوڑی سی “توجہ” کسی کی زندگی کو بدل سکتی ہے۔۔۔ رابطے میں رہئیے،،، زندگی کو خوبصورت بنائیے۔۔۔

_________________________________

ایک چہرہ جو میرے خواب سجا دیتا ہے
مجھ کو میرے ہی خیالوں میں صدا دیتا ہے

ایک چہرہ جو میرے خواب سجا دیتا ہے
مجھ کو میرے ہی خیالوں میں صدا دیتا ہے

وہ میرا کون ہے معلوم نہیں ہے لیکن
جب بھی ملتا ہے تو پہلو میں جگہ دیتا ہے

میں جو اندر سے کبھی ٹوٹ کے بکھروں
وہ مجھے تھامنے کے لئے ہاتھ بڑھا دیتا ہے

میں جو تنہا کبھی چپکے سے بھی رونا چاہوں
تو دل کے دروازے کی زنجیر ہلا دیتا ہے

اس کی قربت میں ہے کیا بات نہ جانے💕
ایک لمحے کے لئے صدیوں کو بھلا دیتا ہے

!!!♥️!!!♥️!!!♥️

ﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ

ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩو
ﺍﺫﯾﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﺮﮮ ﻟﻤﺤﮯ
ﺑﭽﮭﮍﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﻗﺼﮯ
ﮐﮧ ﺟﺐ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ
ﻣﺤﺒﺖ ﺟﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮔﯽ ….!!
ﮐﺌﯽ ﺟﻤﻠﮯ ﻟﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﭙﮑﭙﺎﮨﭧ ﺳﮯ ﮨﯽ
ﭘﺘﮭﺮ ﮨﻮ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ !
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻥ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﻦ ﮐﺮﺗﯽ
ﭼﯿﺨﺘﯽ ﮔﻮﯾﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ
ﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ ……!!
ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ
ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺑﻌﺪ ﮐﺎ ﻣﻨﻈﺮ
ﺩﻝِ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺎ ﻣﻨﻈﺮ
ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺮ ﺁﺭﺯﻭﺅﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﮞ ﻻﺷﻮﮞ ﭘﺮﮐﻮﺋﯽ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮔﺍ …..!!
ﺟﮩﺎﮞ ﻗﺴﻤﺖ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﮐﮩﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ
ﺟُﺪﺍﺋﯽ ﻟﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮔﯽ ……!!
ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻥ ﺳﺮﺩ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﺳﺴﮑﺘﮯ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ ……!!
ﺫﺭﺍ ﭨﮭﮩﺮﻭ …..!!
ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﺩﻭ

________________________

اس درجہ بد گماں ہیں خلوص بشر سے ہم
اپنوں کو دیکھتے ہیں پرائی نظر سے ہم

اس درجہ بد گماں ہیں خلوص بشر سے ہم
اپنوں کو دیکھتے ہیں پرائی نظر سے ہم

غنچوں سے پیار کر کے یہ عزت ہمیں ملی
چومے قدم بہار نے گزرے جدھر سے ہم

واللہ تجھ سے ترک تعلق کے بعد بھی
اکثر گزر گئے ہیں تری رہگزر سے ہم

صدق و صفائے قلب سے محروم ہے حیات
کرتے ہیں بندگی بھی جہنم کے ڈر سے ہم

عقبیٰ میں بھی ملے گی یہی زندگی شکیلؔ
مر کر نہ چھوٹ پائیں گے اس درد سر سے ہم

شکیل بدایونی

___________________________

سنا ہے یاد کرتے ہو

سنا ہے یاد کرتے ہو
کہ جب بھی شام ڈھلتی ہے
ہجر میں جان جلتی ہے
تم اپنی رات کا اکثر سکوں برباد کرتے ہو
سنا ہے یاد کرتے ہو
کہ جب پنچھی لوٹ آتے ہیں
غموں کے گیت گاتے ہیں
سنو !تم لوٹ آؤ نا
یہی فریاد کرتے ہو
سنا ہے یاد کرتے ہو
ستارے جب فلک پہ جگمگاتے ہیں
وہ بیتے ہوئے پل بہت رلاتے ہیں
تم اس دم اپنی آنکھوں میں
مجھے آباد کرتے ہو
سنا ہے یاد کرتے ہو
مجھے تم یاد کرتے ہو

sad ghazal shayari- love sad ghazals
sad ghazal shayari- love sad ghazals

Read more ghazals:

sad ghazals heart touching in urdu

sad ghazal in urdu-ghazals