sad ghazals heart touching in urdu- sad ghazal

0
610

تیرے وصل پہ, تیری قربت پہ لعنت

تیرے وصل پہ, تیری قربت پہ لعنت
جو تجھ سے ہوئی اس محبت پہ لعنت 🖐
تیرے اقرار پے لعنت تیرے جھوٹے پیار پر لعنت🖐
تیری کوٹھی پہ لعنت تیری کار پہ لعنت🖐
تیرے پہلے پیار پہ لعنت بعد کے انکار پہ لعنت🖐
تیری اُس Uummmmaaah والی میڈیسن پہ لعنت🖐
تیری بھولی بھالی سی صورت پے لعنت🖐
تیری زلف کے اک اک بال پہ لعنت🖐
تیری کی گئی ہر اک کال پہ لعنت 🖐
وہ جن لمحوں میں سوچا تھا تمہیں آج اُن لمحوں پہ تہہ دل سے لعنت 🖐
جہاں میں ہوتے ہیں اِک جیسے سات لوگ🖐
اَگرتمہاری شکل کے چھ اور ان پر بھی لعنت 🖐
تجھ پے لعنت تیرے نئے یار پر لعنت.🖐
تیری قسموں پہ لعنت, تیرے وعدوں پہ لعنت 🖐
تیری اس منافقت پہ لعنت 🖐
تیری جتنی گزر گئ اور جتنی رہ گئ …
اس پوری زندگی پہ لعنت 🖐
🤧🤧😷😷😏😏

 

————————-

میں جو بھی ھوں جیسی بھی ھوں  سب سے الگ ہوں

میں جو بھی ہوں
جیسی بھی ہوں
مجھے بھیڑ سے ہٹ کر چلنے کی عادت سی ھے
میں عام لڑکیوں کی طرح
کسی کی ظاہری صورت سے متاثر نہی ھوتی
نہ ھی کسی خوبرو انسان کو دیکھ کر اس پر مر مٹتی ھوں😊
میرا میعار الگ ھے 😊
ہاں
میں جو بھی ھوں
جیسی بھی ھوں  سب سے الگ ہوں

_________________

ﻏﻨﭽﮧﺀ ﻧﺎﺷﮕﻔﺘﮧ ﮐﻮ ﺩُﻭﺭ ﺳﮯ ﻣﺖ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ

ﻏﻨﭽﮧﺀ ﻧﺎﺷﮕﻔﺘﮧ ﮐﻮ ﺩُﻭﺭ ﺳﮯ ﻣﺖ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ
ﺑﻮﺳﮯ ﮐﻮ ﭘﻮﭼﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣُﻨﮧ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺘﺎ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ
ﭘُﺮﺳﺶِ ﻃﺮﺯِ ﺩﻟﺒﺮﯼ ﮐﯿﺠﺌﮯ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺑِﻦ ﮐﮩﮯ
ﺍﺱ ﮐﮯ ﮨﺮ ﺍِﮎ ﺍﺷﺎﺭﮮ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﮯ ﮨﮯ ﯾﮧ ﺍﺩﺍ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ
ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﻣَﮯ ﭘﺌﮯ، ﺳﺎﺗﮫ ﺭﻗﯿﺐ ﮐﻮ ﻟﺌﮯ
ﺁﺋﮯ ﻭﮦ ﯾﺎﮞ ﺧﺪﺍ ﮐﺮﮮ ﭘﺮ ﻧﮧ ﮐﺮﮮ ﺧﺪﺍ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ
ﺑﺰﻡ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﺭُﻭﺑﺮﻭ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺧﻤﻮﺵ ﺑﯿﭩﮭﺌﮯ
ﺍُﺱ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ ﯾﮩﯽ ﻣُﺪﻋﺎ ﮐﮧ ﯾُﻮﮞ
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ” ﺑﺰﻡِ ﻧﺎﺯ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﻏﯿﺮ ﺳﮯ ﺗﮩﯽ ”
ﺳُﻦ ﮐﮯ ﺳِﺘﻢ ﻇﺮﯾﻒ ﻧﮯ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺍُﭨﮭﺎ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ” ﯾُﻮﮞ

_________________________

نیا اک رشتہ پیدا کیوں کریں ھم

نیا اک رشتہ پیدا کیوں کریں ھم
بچھڑنا ھے تو جھگڑا کیوں کریں ھم

خموشی سے ادا ھو رسمِ دُوری
کوئی ھنگامہ برپا کیوں کریں ھم

یہ کافی ھے کہ ھم دشمن نہیں ھیں
وفا داری کا دعویٰ کیوں کریں ھم

وفا اخلاص قربانی محبت
اب ان لفظوں کا پیچھا کیوں کریں ھم

ھماری ھی تمنا کیوں کرو تم
تمہاری ھی تمنا کیوں کریں ھم

کیا تھا عہد جب لمحوں میں ھم نے
تو ساری عمر ایفا کیوں کریں ھم

نہیں دنیا کو جب پروا ھماری
تو پھر دنیا کی پروا کیوں کریں ھم

یہ بستی ھے مسلمانوں کی بستی
یہاں کارِ مسیحا کیوں کریں ھم

________________

گلابی بارش

عجب سماں ہے
میں بند آنکھوں سے تک رہی ہوں
خمار شب میں گلاب رت کی رفاقتوں سے مہک رہی ہوں
وہ نرم خوشبو کی طرح دل میں اتر رہا ہے
میں قرب‌‌ جاں کی لطافتوں سے بہک رہی ہوں
یہ چاہتوں کی حسین بارش کا معجزہ ہے
کہ میری پوریں سلگ رہی ہیں
میں قطرہ قطرہ پگھل رہی ہوں
میں رنگ و خوشبو کا لمس پا کر
وفا کے پیکر میں ڈھل رہی ہوں
نہ میں زمیں پر
نہ آسماں میں
وہ ایسا جادو جگا رہا ہے
گلابی بارش سنہرے سپنوں کے سارے مطلب وہ دھیرے دھیرے سجھا رہا ہے
مجھے وہ مجھ سے چرا رہا ہے…..

_________________

پتوں کی طرح شاخ پہ مرنا پڑا مجھے
موسم کے ساتھ ساتھ گزرنا پڑا مجھے

پتوں کی طرح شاخ پہ مرنا پڑا مجھے
موسم کے ساتھ ساتھ گزرنا پڑا مجھے

ایک شخص کے سلوک کی سب کو سزا ملی
ساری محبتوں سے مکرنا پڑا مجھے

اس سے بچھڑ کے زندگی آسان تو نہیں
پھر بھی یہ تلخ فیصلہ کرنا پڑا مجھے

کچھ دن تو میں چٹان کی صورت ڈٹا رہا
پھر ریزہ ریزہ ہو کے بکھرنا پڑا مجھے

آساں نہیں تھا ٹوٹتی سانسوں کو جوڑنا
اس سلسلے میں جاں سے گزرنا پڑا مجھے

___________________

تباہیوں کا اک دہانہ موڑنا
بہت کٹھن ہے وہ زمانہ موڑنا

ہوس نے اندھا کر دیا وگرنہ تو
یہ دل تو کہتا تھا خزانہ موڑنا

ہرن سے جا کے پوچھو زندگی ہے کیا
یوں عین موقعے پر نشانہ موڑنا

کہانی میں پرانے یار کی خاطِر
کسی کو مار کر فسانہ موڑنا

ہزاروں موڑنا ہتھیلیوں والے
مگر یوں در سے نا دِیوانہ موڑنا

___________________

اُجڑی جھوک وسا، تے مناں
پیرا یار ملا، تے مناں

اُجڑی جھوک وسا، تے مناں
پیرا یار ملا، تے مناں

جیویں دلبر تڑپایا ای مینوں
ہور کوئی تڑپا، تے مناں

ہتھ چھڈ کے جا سو واری
دل میرے چوں جا، تے مناں

نویں مصور اوہدے ورگی
مورت ہور بنا، تے مناں

میں کُرلاندیاں عمر گزاری
دو پل وی کُرلا، تے مناں

قول قرار نیں کرنے سوکھے
قول قرار نبھا، تے مناں

سُکھ دی نیندر توبہ توبہ
دل نوں کِدرے لا، تے مناں

اپنا چُک چُک پھوا ہویا ایں
بھار کسے دا چا، تے مناں

چُوٹھیاں بڑھکاں چُوٹھے دعوے
ہتھاں وچ ہتھ پا، تے مناں

چھڈ گڈگورؔ توں رام کہانی
میرا میل کرا، تے مناں

_______________________
محبتوں میں حساب کیسا
میرے مالک یہ نصاب کیسا
جو سر جھکے تو عشق ٹھہرے
گر زبان چلے تو عذاب کیسا
دشت تو دشت ہے کیا گلہ تشنگی کا
پر جو نظر نہ آئے سیراب کیسا
جو تیری ہی چاہت لاشریک ٹھہری
پھر یہ چاہتوں کا عذاب کیسا

____________________

کچھ ایسا ہو یہ شام ڈھلے
کوئ ہاتھ میں تھامے ہاتھ میرا

کچھ ایسا ہو یہ شام ڈھلے
کوئ ہاتھ میں تھامے ہاتھ میرا
کوئ لے کر مجھ کو ساتھ چلے
کوئ بیٹھے میرے پہلو میں
میرے ہاتھ پہ اپنا ہاتھ رکھے
اور پونچھ کے آنسو آنکھوں سے
وہ دھیرے سے یہ بات کہے۔۔۔۔
یوں تنہا سفر اب نہیں کٹتا۔۔۔۔!
چلوہم بھی تمھارے ساتھ چلیں
کچھ ایسا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی جو شام ڈھلے۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!

_______________

جیسی کرتے ہیں سبھی ویسی محبت کر لیں
بات سچی کریں اور جھوٹی محبت کر لیں

زندگی بھر کی اذیت سے تو بہتر ہے کہ ہم
ایک دو دن کے لیے وقتی محبت کر لیں

پھر سے مل جائے کوئی عہدِ گزشتہ کا سراغ
پھر سے اک بار وہی پہلی محبت کر لیں

ہم بھی شامل ہوں محبت کے گنہگاروں میں
کاش مل جائے کوئی ہم بھی محبت کر لیں

یوں بھی جینا کوئی آسان نہیں ہے ………
زندگی آدھی جیئں باقی محبت کر لیں

sad ghazals heart touching in urdu- sad ghazal
sad ghazals heart touching in urdu- sad ghazal