heart broken ghazals- sad ghazals

0
352

ﺣﯿﺮﺍﮞ ﮨﻮﮞ، ﺩﻝ ﮐﻮ ﺭﻭﺅﮞ ﮐﮧ ﭘﯿﭩﻮﮞ ﺟﮕﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ

ﺣﯿﺮﺍﮞ ﮨﻮﮞ، ﺩﻝ ﮐﻮ ﺭﻭﺅﮞ ﮐﮧ ﭘﯿﭩﻮﮞ ﺟﮕﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﻣﻘﺪﻭﺭ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮐﮭﻮﮞ ﻧﻮﺣﮧ ﮔﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﭼﮭﻮﮌﺍ ﻧﮧ ﺭﺷﮏ ﻧﮯ ﮐﮧ ﺗﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻟﻮﮞ
ﮨﺮ ﺍﮎ ﺳﮯ ﭘُﻮ ﭼﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ “ ﺟﺎﺅﮞ ﮐﺪﮬﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ “
ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﺍ ﺭﻗﯿﺐ ﮐﮯ ﺩﺭ ﭘﺮ ﮨﺰﺍﺭ ﺑﺎﺭ
ﺍﮮ ﮐﺎﺵ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﻧﮧ ﺗﺮﯼ ﺭﮦ ﮔﺰﺭ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﮨﮯ ﮐﯿﺎ، ﺟﻮ ﮐﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﻧﺪﮬﯿﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﻼ ﮈﺭﮮ
ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨُﻮﮞ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﮐﻤﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﻟﻮ، ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ’ ﯾﮧ ﺑﮯ ﻧﻨﮓ ﻭ ﻧﺎﻡ ﮨﮯ ‘
ﯾﮧ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﺍﮔﺮ، ﺗﻮ ﻟُﭩﺎﺗﺎ ﻧﮧ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﭼﻠﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩُﻭﺭ ﮨﺮ ﺍﮎ ﺗﯿﺰ ﺭَﻭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ
ﭘﮩﭽﺎﻧﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨُﻮﮞ ﺍﺑﮭﯽ ﺭﺍﮨﺒﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﻮ ﺍﺣﻤﻘﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﺮﺳﺘﺶ ﺩﯾﺎ ﻗﺮﺍﺭ
ﮐﯿﺎ ﭘُﻮﺟﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﺱ ﺑُﺖِ ﺑﯿﺪﺍﺩ ﮔﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﭘﮭﺮ ﺑﮯ ﺧﻮﺩﯼ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﯿﺎ ﺭﺍﮦِ ﮐﻮﺋﮯ ﯾﺎﺭ
ﺟﺎﺗﺎ ﻭﮔﺮﻧﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﺒﺮ ﮐﻮ ﻣَﯿﮟ
ﺍﭘﻨﮯ ﭘﮧ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨُﻮﮞ ﻗﯿﺎﺱ ﺍﮨﻞِ ﺩﮨﺮ ﮐﺎ
ﺳﻤﺠﮭﺎ ﮨﻮﮞ ﺩﻝ ﭘﺬﯾﺮ ﻣﺘﺎﻉِ ﮨُﻨﺮ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ
ﻏﺎﻟﺐؔ ﺧﺪﺍ ﮐﺮﮮ ﮐﮧ ﺳﻮﺍﺭِ ﺳﻤﻨﺪﺭِ ﻧﺎﺯ
ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﻋﻠﯽ ﺑﮩﺎﺩﺭِ ﻋﺎﻟﯽ ﮔُﮩﺮ ﮐﻮ ﻣﯿﮟ

________________

ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺟﺎﺩﻭ ﭨﻮﻧﮧ ﮐﺮ۔

ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺟﺎﺩﻭ ﭨﻮﻧﮧ ﮐﺮ۔
ﻣﺮﮮ ﻋﺸﻖ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺩﯾﻮﺍﻧﮧ ﮨﻮ۔
ﯾﻮﮞ ﺍﻟﭧ ﭘﻠﭧ ﮐﺮ ﮔﺮﺩﺵ ﮐﯽ۔
ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻊ، ﻭﮦ ﭘﺮﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ۔
ﺯﺭﺍ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﮯ ﭼﺎﻝ ﺳﺘﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺯﺍﺋﭽﮧ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﻗﻠﻨﺪﺭ ﺳﺎ
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺟﻨﺘﺮ ﻣﻨﺘﺮ ﭘﮍﮪ۔
ﺟﻮ ﮐﺮ ﺩﮮ ﺑﺨﺖ ﺳﮑﻨﺪﺭ ﺳﺎ
ﮐﻮﺋﯽ ﭼﻠﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺎﭦ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺳﮑﯽ ﮐﺎﭦ ﻧﮧ ﮐﺮ ﭘﺎﺋﮯ ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺩﮮ ﺗﻌﻮﯾﺰ ﻣﺠﮭﮯ۔
ﻭﮦ ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﻋﺎﺷﻖ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ۔۔
ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺎﻝ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮﺷﻤﮧ ﮔﺮ ۔
ﻣﺮﯼ ﺭﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﻮﻝ ﮔﻼﺏ ﺁﺋﯿﮟ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﮭﻮﮎ ﮐﮯ ﺩﮮ ﺍﯾﺴﺎ۔
ﻭﮦ ﭘﺌﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺁﺋﯿﮟ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺎﻻ ﺟﺎﺩﻭ ﮐﺮ
ﺟﻮ ﺟﮕﻤﮓ ﮐﺮ ﺩﮮ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻥ۔
ﻭﮦ ﮐﮩﮯ ﻣﺒﺎﺭﮎ ﺟﻠﺪﯼ ﺁ ۔
ﺍﺏ ﺟﯿﺎ ﻧﮧ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﺑﻦ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺭﮦ ﭘﮧ ﮈﺍﻝ ﻣﺠﮭﮯ ۔
ﺟﺲ ﺭﮦ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺩﻟﺪﺍﺭ ﻣﻠﮯ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺴﺒﯿﺢ ﺩﻡ ﺩﺭﻭﺩ ﺑﺘﺎ ۔
ﺟﺴﮯ ﭘﮍﮬﻮﮞ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﯾﺎﺭ ﻣﻠﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﻗﺎﺑﻮ ﮐﺮ ﺑﮯ ﻗﺎﺑﻮ ﺟﻦ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺳﺎﻧﭗ ﻧﮑﺎﻝ ﭘﭩﺎﺭﯼ ﺳﮯ
ﮐﻮﺋﯽ ﺩﮬﺎﮔﮧ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﭘﺮﺍﻧﺪﮮ ﮐﺎ
ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻨﮑﺎ ﺍﮐﺸﺎ ﺩﮬﺎﺭﯼ ﺳﮯ ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﻮﻝ ﺳﮑﮭﺎ ﺩﮮ ﻧﺎ۔
ﻭﮦ ﺳﻤﺠﮭﮯ ﺧﻮﺵ ﮔﻔﺘﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﺍ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ۔
ﻭﮦ ﺟﺎﻧﮯ ، ﺟﺎﻥ ﻧﺜﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﻣﯿﮟ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﮈﮬﻮﻧﮉﮪ ﮐﮯ ﻭﮦ ﮐﺴﺘﻮﺭﯼ ﻻ۔
ﺍﺳﮯ ﻟﮕﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﮯ ﺟﯿﺴﺎ ﮨﻮﮞ ۔
ﺟﻮ ﻣﺮﺿﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﯾﺎﺭ ﮐﯽ ﮨﮯ۔
ﺍﺳﮯ ﻟﮕﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻭﯾﺴﺎ ﮨﻮﮞ۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺍﺳﻢ ﺍﻋﻈﻢ ﭘﮍﮪ۔
ﺟﻮ ﺍﺷﮏ ﺑﮩﺎ ﺩﮮ ﺳﺠﺪﻭﮞ ﻣﯿﮟ۔
ﺍﻭﺭ ﺟﯿﺴﮯ ﺗﯿﺮﺍ ﺩﻋﻮﯼ ﮨﮯ
ﻣﺤﺒﻮﺏ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ۔
ﭘﺮ ﻋﺎﻣﻞ ﺭﮎ، ﺍﮎ ﺑﺎﺕ ﮐﮩﻮﮞ۔
ﯾﮧ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﯿﺎ ؟
ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺗﻮ ﮨﮯ ﺳﺮ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﭘﺮ۔
ﻣﺠﮫ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﯽ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﮨﮯ ﮐﯿﺎ۔
ﺍﻭﺭ ﻋﺎﻣﻞ ﺳﻦ ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﺑﺪﻝ۔
ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﺑﮩﺖ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮐﺎ ﮨﮯ۔
ﺳﺐ ﺩﮬﺎﮔﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔
ﺟﻮ ﻣﺎﻟﮏ ﮐﻞ ﺟﮩﺎﻥ ﮐﺎ ﮨﮯ۔

heart broken ghazals- sad ghazals
heart broken ghazals- sad ghazals

Sad lines …………..

کبھی کبھار میں اِس دِل کو سمجھا لیتا ہوں کہ ؛ جو چلا گیا وہ اچھا نہیں تھا تُمہارے حق میں نہ ہی بہتر تھا تبھی دور کر دِیا گیا مُجھ سے اور تب ایسا لگتا ہے جیسے صبر آ گیا ہو ، مگر اگلے ہی لمحے کُچھ نہ کُچھ ایسا ہو جاتا ہے کہ ؛ دِل پھر سے کسی پُرانی یاد کی گرفت میں
آجاتا ہے پھر یوں لگتا ہے جیسے وہ صبر بس غم کا ایک چھوٹا سا وقفہ تھا ، پھر دِل اللّہ پاک سے ضد کرنے لگتا ہے ، اللّہ پاک سے پھر سے اُسی انسان کو مانگنے لگ جاتا ہے ، اور پھر سے اُسی کرب میں مُبتلا ہونے لگتا ہے ۔ ”
” یہ ادھوری یادیں یہ ادھوری باتیں نہ جانے کیوں پیچھا نہیں چھوڑتی ہیں میرا ؛ نہ جانے کیوں دِل کو وہی چیز پسند
آ جاتی ہے جو مِل نہیں سکتی۔
” نہ جانے کیوں ہم عُمر بھر بِلا وجہ بھاگتے رہتے ہیں اِس مُحبت نامی سُراب کے پیچھے ۔ “

” لیکن پھر بھی وہی سب باتیں ، وہی یادیں ؛ نہ جانے کیا ہوگا میرا ۔ ” 💔🙁

 

ﺑﭽﮭﮍ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮨﻢ ﻟﯿﮑﻦ

ﺑﭽﮭﮍ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮨﻢ ﻟﯿﮑﻦ
ﮨﻤﺎﺭﯼ ﯾﺎﺩ ﮐﮯ ﺟُﮕﻨﻮ____
ﺗ۔ﻤﮩﺎﺭﯼ ﺷﺐ ﮐﮯ ﺩﺍﻣﻦ ﻣﯿﮟ
ﺳِﺘﺎﺭﮦ ﺑﻦ ﮐﮯ ﭼﻤﮑﯿﮟ ﮔﮯ
ﺗُﻤﮩﯿﮟ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮔﮯ
ﺑﮩﺖ ﻣﺼﺮﻭﻑ ﺭھﻨﮯ ﮐﮯ
ﺑﮩﺎﻧﮯ ﺗﻢ ﺑﻨﺎﺅ گے________
ﺑﮩﺖ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﻭ گے ﺗُﻢ
ﮐﮧ ﺍﺏ ﻣﻮﺳﻢ ﺟﻮ ﺑﺪﻟﯿﮟ ﺗﻮ
ھﻤﺎﺭﯼ ﯾﺎﺩ ﻧﮧ ﺁﮰ_______
ﻣﮕﺮ
ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ھﻮﮔﺎ________!!!
ﮐﮩﯿﮟ ﺟﻮ ﺳﺮﺩ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ
ﺩِﺳﻤﺒﺮ ﮐﯽ ﮨﻮﺍﺅﮞ ﻣﯿﮟ
ﺗُﻤﮭﺎﺭﮮ ﺩﻝ ﮐﮯ ﮔﻮﺷﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﺟﻤﯽ ھﯿﮟ ﺑﺮﻑ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ
ﻭﮦ ﯾﺎﺩﯾﮟ ﮐﯿﺴﮯ ﭘﮕﮭﻠﯿﮟ ﮔﯽ
ﮐﺒﮭﯽ ﮔﺮﻣﯽ ﮐﯽ ﺗﭙﺘﯽ ﺳُﺮﺥ ﮔﮭﮍﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺎﺿﯽ ﮐﻮ ﺳﻮﭼﻮ گے
ﺗﻮ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﮭﯿﮓ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﯽ
ﮔﮭﮍﯼ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮐﻮ ﺩﻭﮌﮮ ﮔﯽ
ﮐﺌﯽ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﮔُﻢ ﮔﺸﺘﮧ
ھﻤﺎﺭﯼ ﯾﺎﺩ ﺁﮰ ﮔﯽ
ﺑﭽﮭﮍ ﺟﺎﺅ !! ﻣﮕﺮ ﺳُﻦ ﻟﻮ
ھﻤﺎﺭﮮ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﯾﺴﯽ
ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ھﻮﮔﯽ
ﺟِﺴﮯ ﺗُﻢ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻮ گے
ﻣُﺠﮭﮯ ﺗُﻢ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻮ گے____!!!!!

 

ھزار راھیں مُڑ کے دیکھیں

ھزار راھیں مُڑ کے دیکھیں
کہیں سے کوئی صدا نہ آئی
بڑی وفا سے نبھائی تم نے
ھماری تھوڑی سی بے وفائی

جہاں سے تم موڑ مڑ گئے تھے
یہ موڑ اب بھی وھیں پڑے ھیں
ھم اپنے پیروں میں جانے کتنے
بھنور لپیٹے ھُوئے کھڑے ھیں

کہیں کسی روز یوں بھی ھوتا
ھماری حالت تمہاری ھوتی
جو رات ھم نے گزاری مَر کے
وہ رات تم نے گزاری ھوتی

تمہیں یہ ضد تھی کہ ھم بلاتے
ھمیں یہ اُمید وہ پُکاریں
ھے نام ھونٹوں پہ اب بھی ، لیکن
آواز میں پڑ گئی دراڑیں

“گلزار”

-” نماز پڑھنے کا دل نہ کر رہا ہو اور آپ نا چاہتے ہوۓ بھی نماز پڑھ لیں، پکے بہانوں کے باوجود بھی آپ کو لگے کوئی آپ کو نماز کی طرف کھینچ رہا ہے اور آپ نا چاہتے ہوۓ بھی نماز پڑھیں۔
کتنا پیار آتا ہے ناں اپنے رحمٰن پر جیسے ماں نے زبردستی اپنی آغوش میں لے لیا ہو، بچہ نہیں آنا چاہ رہا اور ماں پکڑ کر اسے اپنے بازوؤں میں چھپا لیتی ہے، بلکل ویسا ہی ماں کی گود جیسا سکون۔
نماز بھی تو رحمٰن سے ملاقات کا وقت ہے ناں۔ ❤️😇

Read more content :

– two lines poetry

poetry in english- english poetry