sad ghazals heart touching in urdu

0
388

ﮔﻢ ﺳﻢ ﮨﻮﺍ ، ﺁﻭﺍﺯ ﮐﺎ ﺩﺭﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ

ﮔﻢ ﺳﻢ ﮨﻮﺍ ، ﺁﻭﺍﺯ ﮐﺎ ﺩﺭﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﭘﺘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﺏ ﻭﮦ ،ﺳﺘﺎﺭﺍ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﺮﻑ ﻭﻓﺎ ﮈﮬﻮﻧﮉ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ
ﭼﮩﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮍﮮ ﺷﻮﻕ ﺳﮯ ﭘﮍﮬﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﺻﺤﺮﺍ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺩﯾﺮ ﺳﮯ ﭘﯿﺎﺳﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺷﺎﯾﺪ
ﺑﺎﺩﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﭨﻮﭦ ﮐﮯ ﺑﺮﺳﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﺍﮮ ﺗﯿﺰ ﮨﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺒﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺟﻨﻮﮞ ﮐﯽ
ﺗﻨﮩﺎ ﺳﻔﺮ ﺷﻮﻕ ﭘﮧ ﻧﮑﻼ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﺍﺏ ﺁﺧﺮﯼ ﺳﻄﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﻧﺎﻡ ﺍﺱ ﮐﺎ
ﺍﺣﺒﺎﺏ ﮐﯽ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻼ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎﺋﮯ ﮨﻮﮰ ﭘﮭﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﺌﯽ ﺯﺧﻢ
ﺷﯿﺸﮯ ﮐﮯ ﮐﮭﻠﻮﻧﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮩﻠﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﻣﮍ ﻣﮍ ﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ
ﮐﭽﮭﮧ ﺩﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌﻧﮯ ﺁﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﺍﺏ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﺎ ﻟﺌﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﻨﮯ
ﺳﺎﺋﮯ ﮐﯽ ﺭﻓﺎﻗﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮈﺭﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﮨﺮ ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﭽﮭﮧ ﻧﻘﺶ ﻭﻓﺎ ﭼﮭﻮﮌ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ
ﮐﮩﻨﮯ ﮐﻮ ﺑﮭﺮﮮ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻨﮩﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ
ﻣﻨﮑﺮ ﮨﮯ ﻭﮨﯽ ﺍﺏ ﻣﯿﺮﯼ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﺤﺴﻦ
ﺍﮐﺜﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺧﻂ ﺧﻮﻥ ﺳﮯ ﻟﮑﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﺍﮎ ﺷﺨﺺ

______________

ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺣﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ

ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺣﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﻋﮑﺲ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﺎ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﻧﻐﻤﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺳﺎﺯ ﭘﮧ ﭼﮭﯿﮍﺍ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﻏﻨﭽﮧ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺷﺎﺥ ﺳﮯ ﺗﻮﮌﺍ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﺍﮌﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﻏﺒﺎﺭ ﺳﺮ ﺭﺍﮦ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ
ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮨﻢ ﻧﮯ ﻋﺸﻖ ﮐﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﺑﺎﺩﻝ ﻓﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ
ﺳﺎﯾﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺍ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ
ﺭﻧﮓ ﺷﻔﻖ ﺳﮯ ﺁﮒ ﺷﮕﻮﻓﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﮓ ﮔﺌﯽ
ﺳﺎﻏﺮؔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭼﮭﻠﮑﺎ ﺗﻮ ﺭﻭ ﺩﺋﯿﮯ

________________

ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎ، ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ

ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﺎ، ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﮐﺸﺘﯽ ﮐﮯ ﻣُﺴﺎﻓﺮ ﻧﮯ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﺑﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﮔﺮ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ ،ﺳﺐ ﭼﻮﻧﮏ ﭘﮍﯾﮟ ﮔﮯ
ﺍِﮎ ﻋُﻤﺮ ﮨُﻮﺋﯽ ﺩِﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﯾﺎﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻣُﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﮟ ﮐﺮ ﻟِﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ
ﭘُﮭﻮﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼُﮭﭙﺎﯾﺎ ﮨُﻮﺍ ﺧﻨﺠﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﻣﺤﺒُﻮﺏ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﮨﻮ ﮐﮧ، ﺑﺰﺭﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻨﯿﮟ !
ﺟﻮ ﭼﮭﻮﮌﺩِﯾﺎ، ﭘﮭﺮ ﺍُﺳﮯ ﻣﮍﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﺟﺲ ﺩﻥ ﺳﮯ ﭼﻼ ﮨُﻮﮞ ﻣِﺮﯼ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﮧ ﻧﻈﺮ ﮨﮯ
ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻣِﯿﻞ ﮐﺎ ﭘﺘّﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﯾﮧ ﭘُﮭﻮﻝ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻭِﺭﺍﺛﺖ ﻣﯿﮟ ﻣِﻠﮯ ﮨﯿﮟ
ﺗﻢ ﻧﮯ ﻣِﺮﺍ ﮐﺎﻧﭩﻮﮞ ﺑﮭﺮﺍ ﺑﺴﺘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﺧﻂ ﺍﯾﺴﺎ ﻟﮑﮭّﺎ ﮨﮯ، ﮐﮧ ﻧﮕﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﺟُﮍﮮ ﮨﯿﮟ
ﻭﮦ ﮨﺎﺗﮫ، ﮐﮧ ﺟﺲ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺯﯾﻮﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﭘﺘّﮭﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﻣِﺮﺍ ﭼﺎﮨﻨﮯ ﻭﺍﻻ
ﻣﯿﮟ ﻣﻮﻡ ﮨُﻮﮞ، ﺍُﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭼُﮭﻮﮐﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ

____________________

میرا بس چلے تو تیری سوچوں پر
اپنی یادوں کا پہرا بیٹھا دوں

میرا بس چلے تو تیری سوچوں پر
اپنی یادوں کا پہرا بیٹھا دوں
تُو دیکھے تو مجھے
تُو سوچے تو مجھے
ذکر ہو تو میرا
خیال ہو تو میرا
تیرا ماضی بھی میں
تیرا حال بھی میں
تیرا آنے والا کل بھی میں
میرا بس چلے تو تُجھے یوں چاہوں
کہ میری چاہت کی ابتدا بھی تُو
میری چاہت کی انتہا بھی تُو
میرا عشق بھی تُو
میرا ایمان بھی تُو
میری ذات بھی تُو
میری بات بھی تُو
ہو عشق کی انتہا کچھ اسطرح
جو تُو نہیں تو میں نہیں
جو میں نہیں تو تُو نہیں

__________________________

کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے
روز اک تازہ خبر خلق خدا چاہتی ہے

کوئی مژدہ نہ بشارت نہ دعا چاہتی ہے
روز اک تازہ خبر خلق خدا چاہتی ہے

موج خوں سر سے گزرنی تھی سو وہ بھی گزری
اور کیا کوچۂ قاتل کی ہوا چاہتی ہے

شہر بے مہر میں لب بستہ غلاموں کی قطار
نئے آئین اسیری کی بنا چاہتی ہے

کوئی بولے کے نہ بولے قدم اٹھیں نہ اٹھیں
وہ جو اک دل میں ہے دیوار اٹھا چاہتی ہے

ہم بھی لبیک کہیں اور فسانہ بن جائیں
کوئی آواز سر کوہ ندا چاہتی ہے

یہی لو تھی کہ الجھتی رہی ہر رات کے ساتھ
اب کے خود اپنی ہواؤں میں بجھا چاہتی ہے

عہد آسودگی جاں میں بھی تھا جاں سے عزیز
وہ قلم بھی مرے دشمن کی انا چاہتی ہے

بہر پامالی گل آئی ہے اور موج خزاں
گفتگو میں روش باد صبا چاہتی ہے

خاک کو ہمسر مہتاب کیا رات کی رات
خلق اب بھی وہی نقش کف پا چاہتی ہے

افتخار عارف

_______________________

اُسے کہنا نومبر جا رہا ہے

دھوپ کی تپش ٹھنڈی ہو رہی ہے…
دل بے وجہ اداس رہنے لگا ہے،انگوروں کے پتے لال ہو کر جھڑنے لگے ہیں…گلاب تھک رہے ہیں….🥀
سنو تم لوٹ آو نا

__________________

غُرورِ حُسن میں شاہی جلال ہوتا ہے
پری رُخوں کا سبھی کچھ کمال ہوتا ہے

غُرورِ حُسن میں شاہی جلال ہوتا ہے
پری رُخوں کا سبھی کچھ کمال ہوتا ہے
تراش ایسی کہ رُکتی ہے سانس دَھڑکن کی
پھر اُس پہ چلنا قیامت کی چال ہوتا ہے
قسم خدا کی اے لفظوں سے ماورا لڑکی
بدن اور ایسا بدن ، خال خال ہوتا ہے
پناہ بادَلوں میں ڈُھونڈتا ہے ماہِ تمام
جو بے حجاب وُہ زُہرہ جمال ہوتا ہے
خدا ہی جانے اُسے چوم لیں تو پھر کیا ہو
جو گال نام سے بوسے کے لال ہوتا ہے
اَگر وُہ لب نظر آئیں تو زُلف بھی دیکھو
ہر ایک دانے پہ موجود جال ہوتا ہے
نگاہِ قیسؔ سے دیکھو ، ہمیشہ لیلیٰ کو
صنم کسی کا بھی ہو ، بے مثال ہوتا ہے

____________________________

غزل۔ عشق اور بیزاری

لکھیں بھی تو کیا لکھیں، صبح سے ہے بیزاری
چاۓ بھی ہوئی ٹھنڈی، جیسے تیری سرشاری

کہہ دیجئے الفت سے، کوئی بھی نہیں گھر پہ
گر جنگ انا کی ہے، پھر کیسی وضع داری

جانا ہے تو پھر جاؤ، یونہی نہیں دھمکاؤ
دو دن بھی نہیں چلتی، سٹھیاپے کی دلداری

تم برسرِ الزاماں، ہم خندہ جبیناناں
یہ کیسا تماشہ ہے، یہ کیسی پیارا پیاری

اس عشق سے توبہ ہے، نیلمؔ نے یہ سوچا ہے
یہ مفت کی چخ چخ ہے، یہ کام ہے بازاری

____________________

زندگی یُوں تھی کہ ………جینے کا بہانہ تُو تھا​
ہم فقط زیبِ حکایت تھے…………. فسانہ تُو تھا

ہم نےجس کو بھی چاہا ترے ہجراں میں، وہ لوگ​
آتے جاتے ہوئے موسم تھے…………… زمانہ تُو تھا​

اب کے کچھ دل ہی نہ مانا………… کہ پلٹ کر آتے​
ورنہ ہم دربدروں کا تو ٹھکانہ……………. تُو تھا​

یار و اغیار کے ہاتھوں میں ….کمانیں تھیں فرازؔ​
اور سب دیکھ رہے تھے ………..کہ نشانہ تُو تھا

*احمد فراز*

 

sad ghazals heart touching in urdu
sad ghazals heart touching in urdu

Read more content :

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here