sad ghazal in urdu- sad ghazal poetry

ﮐﺴﯽ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ

ﮐﺴﯽ ﺣﺮﻑ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺗﺮﺍ ﺫﮐﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﮐﺘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﮐﺴﯽ ﺁﻧﮑﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺭﻭﺷﻨﯽ
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺍﺏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﺬﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺻﺤﺮﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﻣﺮﯼ ﻃﺮﺡ
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺩﻝ ﺑﺪ ﮔﻤﺎﮞ ﺗﺮﮮ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﻮﯾﺪ ﮨﻮ
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺭِ ﺩﺳﺖ ﮔﻼﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺍﺳﮯ ﻻﮐﮫ ﺩﻝ ﺳﮯ ﭘﮑﺎﺭ ﻟﻮ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﻮ
ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﺣﺮﻑ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ
ﺗﺮﯼ ﺭﺍﮦ ﺗﮑﺘﮯ ﺭﮨﮯ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﺧﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﯽ
ﮐﮧ ﯾﮧ ﺩﻥ ﺑﮭﯽ ﺗﯿﺮﮮ ﺣﺴﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ

____________

ﻣﺤﺒﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﮧ ﻭﺻﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔

ﻣﺤﺒﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﮧ ﻭﺻﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
ﺑﭽﮭﮍ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
۔۔
ﻭﮨﯽ ﮨُﻮﺍ ﻧﺎ ، ﺑﺪﻟﺘﮯ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮯ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺑﮭﻼ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔۔۔
ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺭُﺕ ﮨﻮ ﻧﮧ ﭼﺎﮨﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺯﻭﺍﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
۔۔
ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﺎﻧﺴﯿﮟ ﺍﮐﮭﮍ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ ﺳﻔﺮ ﮐﮯ ﺁﻏﺎﺯ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﯾﺎﺭﻭ
ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﮏ ﮐﮯ ﻧﮧ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮉﮬﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
۔
ﺟﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ ﯾﮩﯽ ﺗﻮ ﺩﺳﺘﻮﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ
ﺟﺪﺍﺋﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﻗﺮﺑﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﻼﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
۔
ﭼﻠﻮ ﮐﮧ ﻓﯿﻀﺎﻥ ﮐﺸﺘﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﻼ ﺩﯾﮟ ﮔﻤﻨﺎﻡ ﺳﺎﺣﻠﻮﮞ ﭘﺮ
ﮐﮧ ﺍﺏ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻧﮧ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﮨﻮ ﮔﺎ۔۔۔ ﯾﮧ ﻃﮯ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔

________

ﮨﺮ ﺩﺭﺩ ﭘﮩﻦ ﻟﯿﻨﺎ ، ﮨﺮ ﺧﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮ ﺟﺎﻧﺎ

ﮐﯿﺎ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﮨﮯ ، ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﮐﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﺍﮎ ﺷﮩﺮ ﺑﺴﺎ ﻟﯿﻨﺎ ﺑﭽﮭﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ
ﭘﮭﺮ ﺷﺐ ﮐﮯ ﺟﺰﯾﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺩﻝ ﺗﮭﺎﻡ ﮐﮯ ﺳﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﻣﻮﺿﻮﻉِ ﺳﺨﻦ ﮐﭽﮫ ﮨﻮ ، ﺗﺎ ﺩﯾﺮ ﺍﺳﮯ ﺗﮑﻨﺎ
ﮨﺮ ﻟﻔﻆ ﭘﮧ ﺭﮎ ﺟﺎﻧﺎ ، ﮨﺮ ﺑﺎﺕ ﭘﮧ ﮐﮭﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﺁﻧﺎ ﺗﻮ ﺑﮑﮭﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﺳﺎﻧﺴﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﮩﮏ ﺑﻦ ﮐﺮ
ﺟﺎﻧﺎ ﺗﻮ ﮐﻠﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻧﭩﮯ ﺳﮯ ﭼﺒﮭﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﭗ ﺭﮨﻨﺎ ﺍﻥ ﺑﻮﻟﺘﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﮐﺎ
ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺗﮑﻠﻢ ﺳﮯ ﭘﻠﮑﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﮕﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﻟﻔﻈﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮ ﺁﻧﺎ ﺍﻥ ﭘﮭﻮﻝ ﺳﮯ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﮐﺎ
ﺍﮎ ﻟﻤﺲ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﮐﺎ ﭘﻮﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﻤﻮ ﺟﺎﻧﺎ
ﮨﺮ ﺷﺎﻡ ﻋﺰﺍﺋﻢ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﻣﺤﻞ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﻨﺎ
ﮨﺮ ﺻﺒﺢ ﺍﺭﺍﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﺩﮨﻠﯿﺰ ﭘﮧ ﺳﻮ ﺟﺎﻧﺎ

______________

ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﮯ
ﯾﺎﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﮐﮭﻠﯽ ﺳﮍﮐﻮﮞ ﭘﺮ
ﺧﺸﮏ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺭﻭﺯ ﺑﮑﮭﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﻮﮞ

______________

اصولِ مئے کشی بدلا ، مزاجِ آرزو بدلا
مگر ساقی! نہ تیری انجمن بدلی نہ تُو بدلا

 

ہم اپنی بزم میں بھی اجنبی معلوم ہوتے ہیں
گلہ غیروں کا کیا کیجے جب اپنوں کا لہو بدلا

غریبی میں بھی اکثر دیکھنے والوں نے دیکھا ہے
کہ ہم نے جامِ جم سے بھی نہ مٹی کا سبُو بدلا

ترے میخانے میں ہے ظرف والوں کی کمی ساقی
یہاں دو گھونٹ جس نے پی اسی کا رنگِ رُو بدلا

غزل میں شکوہ سنجی اپنی عادت تو نہ تھی عاجز
مگر ہم نے بہ مجبوری طریقِ گفتگو بدلا

____________________

کبھی رک گئے, کبھی چل دیئے
کبھی چلتے چلتے بھٹک گئے

یونہی عمر ساری گزار دی !!
یونہی زندگی کے ستم سہے
کبھی نیند میں، کبھی ہوش میں
وہ جہاں ملا ….. اسے دیکھ کر
نہ نظر ملی نہ زباں ھلی !!!
یونہی سر جھکا کر *گزر گئے
مجھے یاد ہے کبھی ایک تھے
مگر آج ہم ہیں جدا جدا !!!
وہ جدا ہوئے تو سنور گئے
ہم جدا ہوئے تو بکھر گئے
کبھی عرش پر، کبھی فرش پر
کبھی ان کے در، کبھی در بدر !!
غم عاشقی تیرا شکریہ !!!
ہم کہاں کہاں سے گزر گئے

______________________

شبنم ہے کہ دھوکا ہے کہ جھرنا ہے کہ تم ہو
دل دشت میں اک پیاس تماشہ ہے کہ تم ہو

اک لفظ میں بھٹکا ہوا شاعر ہے کہ میں ہوں
اک غیب سے آیا ہوا مصرع ہے کہ تم ہو
دروازہ بھی جیسے مری دھڑکن سے جڑا ہے
دستک ہی بتاتی ہے پرایا ہے کہ تم ہو
اک دھوپ سے الجھا ہوا سایہ ہے کہ میں ہوں
اک شام کے ہونے کا بھروسہ ہے کہ تم ہو
میں ہوں بھی تو لگتا ہے کہ جیسے میں نہیں ہوں
تم ہو بھی نہیں اور یہ لگتا ہے کہ تم ہو

________________

خود کو برے لوگوں کی صحبت سے بچائیں،پتا ہے ہم جتنے بھی مضبوط کردار کے ہوں، کتنا بھی یقین ہو ہم کبھی بدل نہیں سکتے ۔۔۔بری چیزیں، برے دوست آپ کو بدل دیں گے،
اور پھر بری چیزوں میں لذت بھی تو بہت ہے،اچھی باتوں کو کرتے وقت بڑی مشکلوں سے گزرنا پڑتا ہے، جبکہ بری چیز آسانی سے ہو جاتی ہے؛
مگر بری عادت شیطانی دلدل میں گھسیٹ کر لے جاتی ہے، پھر ہم جتنی بھی کوشش کریں،ہم اس دلدل سے باہر نہیں آ سکتے۔۔اس کا بہتر طریقہ یہ ہے کہ بری صحبت سے دور رہو۔۔
خوبصورت اور معصوم سفید رنگ جتنا پاکیزہ ہو، اتنی جلدی وہ اپنے اندر گند کو جذب کرتا ہے، اور پھر شیطان بھی تو اس پہ وار کرنے کی کوشش میں لگا رہتا ہے جو اللہ کا نیک بندہ ہو۔۔اسے کوئی ایک موقع چاہیئے ہوتا ہے، اور وہ موقع آپ اسے خود دیتے ہو۔۔
کبھی یہ کہہ کر کہ ایک بار ہی تو کیا ہے، اگلی بار چھوڑ دوں گا۔۔
اور پھر وہ اگلی باری خودبخود آ جاتی ہے۔۔
برے دوستوں کو چھوڑ دیں، برا مطالعہ چھوڑ دیں، فحش مواد دیکھنا۔۔سننا۔۔چھوڑ دیں۔۔
یہ سب لے ڈوبے گا آپکو۔۔میری اس بات کا سکرین شاٹ لے لو۔۔کل کو جب تھوڑی سمجھ آئے گی نا۔۔تب بہت پچھتاو گے۔۔مگر وقت مہلت نہیں دیتا ۔۔وقت صرف سزا دیتا ہے۔۔
یہ بات بھی رکھنا یاد۔۔کہ آج زور جوانی پہ ہم برے کام کر بھی لیں تو ہم خاک کے پتلوں کا آخر صرف موت ہے۔۔
فرصت ملے تو اپنی زندگی کے کسی ایک دن کے چوبیس گھنٹوں میں سے 5 منٹ نکالنا ۔۔اور سوچنا کہ آپ کہاں سے آئے ہو۔۔مقصد کیا ہے۔۔کیوں آئے ہو۔۔اور آخر کیا ہے۔۔؟؟
اگر میری کوئی بات بری لگی ہو تو معافی کی طلبگار ہوں۔۔

_____________

جنوں میں جرم وفا بار بار ھم نے کیا
تیری نگاہ پے کیوں اعتبار ھم نے کیا.
ھمیں خبر تھی شَب ھجر تو نہ آئے گا.
خلوص دل سے مگر انتطار ھم نے کیا

sad ghazal in urdu- sad ghazal poetry
sad ghazal in urdu- sad ghazal poetry

Read more content :

urdu poetry- urdu shayari

romantic shayari pic -poetry

Leave a Reply

Your email address will not be published.