best sad ghazals collection -sad ghazal

0
329

ﺷﺎﻡِ ﻓﺮﺍﻕ، ﺍﺏ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮫ، ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺁﮐﮯ ﭨﻞ ﮔﺌﯽ

ﺷﺎﻡِ ﻓﺮﺍﻕ، ﺍﺏ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮫ، ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺁﮐﮯ ﭨﻞ ﮔﺌﯽ
ﺩﻝ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﺑﮩﻞ ﮔﯿﺎ، ﺟﺎﮞ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﭘﮭﺮ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﮔﺌﯽ
ﺑﺰﻡِ ﺧﯿﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﮮ ﺣﺴﻦ ﮐﯽ ﺷﻤﻊ ﺟﻞ ﮔﺌﯽ
ﺩﺭﺩ ﮐﺎ ﭼﺎﻧﺪ ﺑﺠﮫ ﮔﯿﺎ، ﮨﺠﺮ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ ﮈﮬﻞ ﮔﺌﯽ
ﺟﺐ ﺗﺠﮭﮯ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﻟﯿﺎ، ﺻﺒﺢ ﻣﮩﮏ ﻣﮩﮏ ﺍﭨﮭﯽ
ﺟﺐ ﺗﺮﺍ ﻏﻢ ﺟﮕﺎ ﻟﯿﺎ، ﺭﺍﺕ ﻣﭽﻞ ﻣﭽﻞ ﮔﺌﯽ
ﺩﻝ ﺳﮯ ﺗﻮ ﮨﺮ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮐﺮﮐﮯ ﭼﻠﮯ ﺗﮭﮯ ﺻﺎﻑ ﮨﻢ
ﮐﮩﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﺎﺕ ﺑﺪﻝ ﺑﺪﻝ ﮔﺌﯽ
ﺁﺧﺮِ ﺷﺐ ﮐﮯ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﻓﯿﺾ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺋﮯ
ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﮐﺲ ﺟﮕﮧ ﺻﺒﺎ، ﺻﺒﺢ ﮐﺪﮬﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﯽ

_______________

ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﮧ ﺑﮯ ﻭﻓﺎ ﮨﻮﺟﺎﺋﻴﮟ

ﮐﻴﻮﮞ ﻧﮧ ﺍﮮ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﻢ ﺟﺪﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ
ﺗﻮ ﺑﮭﻲ ﮨﻴﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﻦ ﮔﻴﺎ ﺗﮭﺎ ﭘﺘﮭﺮ
ﮨﻢ ﺑﮭﻲ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﻴﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ
ﺗﻮ ﮐﮧ ﻳﮑﺘﺎ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﮨﻮﺍ
ﮨﻢ ﺑﮭﻲ ﭨﻮﭨﻴﮟ ﺗﻮ ﺟﺎ ﺑﺠﺎ ﮨﻮﺟﺎﺋﻴﮟ
ﮨﻢ ﺑﮭﻲ ﻣﺠﺒﻮﺭﻳﻮﮞ ﮐﺎ ﻋﺬﻉ ﮐﺮﻳﮟ
ﭘﮭﺮ ﮐﮩﻴﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﺒﺘﻼ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ
ﮨﻢ ﺍﮔﺮ ﻣﻨﺰﻟﻴﮟ ﻧﮧ ﺑﻦ ﭘﺎﺋﮯ
ﻣﻨﺰﻟﻮﮞ ﺗﮏ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ
ﺩﻳﺮ ﺳﮯ ﺳﻮﭺ ﻣﻴﮟ ﮨﻴﮟ ﭘﺮﻭﺍﻧﮯ
ﺭﺍﮐﮫ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ ﻳﺎ ﮨﻮﺍ ﮨﻮﺟﺎﺋﻴﮟ
ﺍﺏ ﮐﮯ ﮔﺮ ﺗﻮ ﻣﻠﮯ ﺗﻮ ﮨﻢ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ
ﺍﻳﺴﮯ ﻟﭙﭩﻴﮟ ﮐﮧ ﻗﺒﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻴﮟ
ﺑﻨﺪﮔﻲ ﮨﻢ ﻧﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﻱ ﻓﺮﺍﺯ
ﮐﻴﺎ ﮐﺮﻳﮟ ﺟﺐ ﻟﻮﮒ ﺧﺪﺍ ﮨﻮﺟﺎﺋﻴﮟ

____________

ﺍُﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﺮﺩﺍ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﺗﮭﯽ، ﺟﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﻭﺍﻗﻒِ ﺣﺎﻝ ﺗﮭﺎ

ﺍُﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﺮﺩﺍ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﺗﮭﯽ، ﺟﻮ ﻣﯿﺮﺍ ﻭﺍﻗﻒِ ﺣﺎﻝ ﺗﮭﺎ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺻﺒﺢِ ﻋﺮﻭﺝ ﺗﮭﯽ، ﻭﮨﯽ ﻣﯿﺮﺍ ﻭﻗﺖِ ﺯﻭﺍﻝ ﺗﮭﺎ
ﻣﯿﺮﺍ ﺩﺭﺩ ﮐﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﺟﺎﻧﺘﺎ، ﻣﯿﺮﯼ ﺑﺎﺕ ﮐﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﻣﺎﻧﺘﺎ
ﻭﮦ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﻓﻨﺎ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ، ﺍُﺳﮯ ﺭﻭﮐﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﺤﺎﻝ ﺗﮭﺎ
ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺅ ﮔﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ، ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﭘﻮﭼﮫ ﭘﻮﭼﮫ ﮐﮯ ﺗﮭﮏ ﮔﯿﺎ
ﻭﮦ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻧﮧ ﺩﮮ ﺳﮑﺎ، ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺳﺮﺍﭘﺎ ﺳﻮﺍﻝ ﺗﮭﺎ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﮔﯿﺎ، ﻭﮨﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﺎ ﮔﯿﺎ
ﻋﺠﺐ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮨﯿﺒﺖِ ﺣﺴﻦ ﺗﮭﯽ، ﻋﺠﺐ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻧﮓِ ﺟﻤﺎﻝ ﺗﮭﺎ
ﺩﻡِ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﺍﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ، ﻧﮧ ﻭﮦ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻧﮧ ﻭﮦ ﺗﺎﺯﮔﯽ
ﻭﮦ ﺳﺘﺎﺭﮦ ﮐﯿﺴﮯ ﺑﮑﮭﺮ ﮔﯿﺎ، ﻭﮦ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺗﮭﺎ
ﻭﮦ ﻣﻼ ﺗﻮ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﮭﯽ، ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺐ ﭘﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﻠﮧ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ
ﺍُﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﭼﭗ ﻧﮯ ﺭﻻ ﺩﯾﺎ، ﺟﺴﮯ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﺎﻝ ﺗﮭﺎ
ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮓ ﮐﮯ ﻭﮦ ﺭﻭ ﺩﯾﺎ، ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﻓﻘﻂ ﺍﺗﻨﺎ ﻭﮦ ﮐﮩﮧ ﺳﮑﺎ
ﺟﺴﮯ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ، ﻭﮦ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﻭﮨﻢ ﻭ ﺧﯿﺎﻝ ﺗﮭﺎ

______________

ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﯿﺎﮞ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ

ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﯿﺎﮞ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺣﺎﻟﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ
ﻓﺮﺍﺯؔ ﺗﺠﮫ ﮐﻮ ﻧﮧ ﺁﺋﯿﮟ ﻣﺤﺒﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ
ﯾﮧ ﻗﺮﺏ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗُﻮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﯿﮟ​
ﺷﻤﺎﺭ ﺍﺑﮭﯽ ﺳﮯ ﺟﺪﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﺳﺎﻋﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺪﺍ ﮨﻮ ﮐﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﺟﺴﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﭼﺎﮨﯿﮟ​
ﺗﻤﺎﻡ ﻋﻤﺮ ﺍُﺳﯽ ﮐﯽ ﻋﺒﺎﺩﺗﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﺳﺐ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﺮﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﺍُﺱ ﮐﮯ​
ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺷﮑﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺷﮑﺎﯾﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ​
ﺫﺭﺍ ﺳﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﮧ ﺑﺮﭘﺎ ﻗﯿﺎﻣﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﻣﻠﯿﮟ ﺟﺐ ﺍُﻥ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻣﺒﮩﻢ ﺳﯽ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﻧﺎ​
ﭘﮭﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺳﻮ ﺳﻮ ﻭﺿﺎﺣﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮐﯿﺴﮯ ﻣﮕﺮ ﺩﺷﻤﻨﯽ ﻧﺒﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ​
ﮨﻤﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﺍﺱ ﻧﮧ ﺁﺋﯿﮟ ﻣﺤﺒﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ​
ﮐﺒﮭﯽ ﻓﺮﺍﺯؔ ﻧﺌﮯ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﻭ ﺩﯾﻨﺎ​
ﮐﺒﮭﯽ ﺗﻼﺵ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﺭﻓﺎﻗﺘﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ

___________________
تمہیں یاد ہے جاناں !
گزشتہ سال نومبر میں

اسی طرح کا موسم تھا ،،،،،
جب تم نے کہا تھا مجھ سے
چلو ہم نام بدلتے ہیں
کوئی اچھے سے فرضی نام ،،،،،،،،
ہاں ! اس وقت میں نے تمہاری بات.
ان سُنی سی کردی تھی ،،،،
مگر جب سے لگی ٹھوکر
تو اب کچھ نام ذہن میں آگئے
آج سے اسی نومبر میں
وہ فرضی نام رکھے ہیں
میرا نام آج سے “تنہا ”
اور تمہارا نام “موسم ” ہے
کہ ” تنہا ” اناپرست ٹہرا
اور موسم
بیوفا جاناں

______________________

“عاشقی“

وہ شخص جو
محبتوں کے پمفلٹ تھا بانٹتا
دیارِ دل میں آج کل
مسافروں کو ڈانٹتا
ہے ڈانٹتا کہ راہ گزر
بہت طویل ہے سفر
بہت اجاڑ بام و در
نصیب ہو بھی جائیں تو
یہاں سکُوں حرام ہے
یہاں پہ منزلوں کو پا کے بھی تھکن ہی کار بند رہے مگر
خوشی کے چار پل کبھی اگر ملیں بھی تو اُسے
کسی کی آنکھ کا بھرم
سہارتے
کسی نگاہ کا قرض اتارتے
ہی بیت جاۓ پر یہاں
یہ حوصلہ
وفا کے راستے ابھی بھی پاک صاف ہیں مگر
اخیر کب تلک اخیر کب تلک
کہ ہر طرف
ہجومِ عاشقاں ہے بس
جو کہہ رہا
ہمارے جیسا کون ہے
انہیں کیا بتاؤں اب
یہ عاشقی حوس سے دور کی زمین ہے جہاں
فصل اگر اگاؤ تم تو کاٹنے کی نوبتیں
کسی کی دسترس کی لازوال قدرتوں کے زیرِ بار ہیں
سمجھ جاؤ کہ اب یہاں
وہ رنگ حسن و ماہ پری
کہ جس کی چاندنی میں بیٹھ کر سکوں ملے
زندگی کی شام ہو
اشارتاً بھی نا ملے
مگر وہ عاشقی کہ جس میں زخم تک ادھیڑ کر
کبھی نگاہِ دلنواز جو چمک اٹھے اگر
زبان کنگ ہو بھی تو
یہ دل سدا جواں رہے کہ عاشقی کے راستے
سدا محاذِ سخن پر
جوانی گلفشاں رہے
یہ عاشقی جواں رہے

___________________

جب اس کا موسمی لہجہ بدلنے والا تھا…
تو میں بھی حسبِ ارادہ بدلنے والا تھا

ہمارے سامنے منزل تھی، اور میں مورکھ…
تمہاری آس میں رستہ بدلنے والا تھا…

وہ غم کے ذکر میں رونے کو ٹھیک کہتا تھا…
گو میری بات کا درجہ بدلنے والا تھا…

عجب کہ جس کو میں اپنا ہمیشہ کہتا تھا…
وہ شخص مجھ سے بھی زیادہ بدلنے والا تھا…

یہاں جو طورِ محبت ہو، تو سبھی خوش ہیں…
میں اس دلیل سے دنیا بدلنے والا تھا…

وہ بانٹ بانٹ کے دولت کما رہا تھا دل…
مگر زمانے کا سکہ بدلنے والا تھا…

نہ دشت قیس کو تنہا نگلنا چاہتا تھا…
نہ قیس دشت کو تنہا بدلنے والا تھا…

یہ شوق آپ کی نسبت سے ہم نے پالا ہے…
وگرنہ ہجر کا رتبہ بدلنے والا تھا…

وہ گاؤں آج بھی صحرا کے پاس پڑتا ہے…
سنا تھا شہر تو رقبہ بدلنے والا تھا…

یہ لوگ… ہنستے ہوئے جو بچھڑ گئے ایسے…
یہ سب رواج تو میلا بدلنے والا تھا…

چراغ روشنی کا بھاؤ زیادہ کرنے کو…
طلب رسد کا بھی نقشہ بدلنے والا تھا…

وہ میری آنکھ سے اوجھل ہوا تو میں سمجھا…
وہی تھا، جو مری دنیا بدلنے والا تھا…

وہ رو پڑا تھا کہ، باقی، یہ میرا قصہ ہے…
یہ اور بات، میں قصہ بدلنے والا تھا…

 

best sad ghazals collection -sad ghazal
best sad ghazals collection -sad ghazal

Read more content :

love status shayari – status poetry

whatsapp poetry -whatsapp poetry

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here