sad ghazal about life in urdu- latest urdu sad ghazal

بس ایک معافی ، ہماری توبہ کبھی جو ایسے ستائیں تم کو

بس ایک معافی ، ہماری توبہ کبھی جو ایسے ستائیں تم کو
لو ہاتھ جوڑے ، لو کان پکڑے ، اب اور کیسے منائیں تم کو

تمہارے آتے ہی اس نگر سے، ہمیں رقابت سی ہو گئی ہے
میں یہ شرارت بھی کیسے سہہ لوں کہ چھو رہی ہیں ہوائیں تم کو

تم آئینہ ہو اور سنگباری یہاں کے لوگوں کا مشغلہ ہے
ہر ایک پتھر سے ڈھال بن کر،بھلا کہاں تک بچائیں تم کو

جو سچ کہیں تو ، تمھیں تو غصے نے اور دلکش بنا دیا ہے
ہمارے من کو تو سوجھتا ہے ، اب اورغصہ دلائیں تم کو

تو کیا تم اب تک ، ہماری نظروں کے سب تقاضوں سے بے خبر ہو؟
ہمیں محبت ہے تم سے پاگل، اب اور کیسے بتائیں تم کو

بتائیں تم کو بچھڑتے لمحے ، لبوں کی لغزش کا کیا سبب تھا؟
سنا تھا وقتِ قبولیت ہے ، سو دے رہے تھے دعائیں تم کو

________________

کوئی تو ہوتا

کوئی تو ہوتا

میں جس کے دل کی کتاب بنتا
میں جس کی چاہت کا خواب بنتا

میں ہجر کے موسم کی لمبی راتوں میں
یاد بن کر عذاب بنتا

جو میری خواہش میں اُٹھ کے راتوں کو خوب روتا
دُکھوں کی چادر لپیٹ کر ہجومِ دنیا سے دور ہوتا

میں رُوٹھ جاتا مناتا مجھ کو
کہ چاہے میرا قصور ہوتا

کوئی تو ہوتا

میں جس کے اتنا قریب ہوتا
نہ پاس کوئی رقیب ہوتا
میں تنہا اُس کا حبیب ہوتا
یہ سلسلہ بھی عجیب ہوتا

کوئی تو ہوتا

کاش!

کوئی تو ہوتا

___________________

تیری ہر بات محبت میں گوارا کر کے

تیری ہر بات محبت میں گوارا کر کے
دل کے بازار میں بیٹھے ہیں خسارہ کر کے

آتے جاتے ہیں کئی رنگ مرے چہرے پر
لوگ لیتے ہیں مزا ذکر تمہارا کر کے

ایک چنگاری نظر آئی تھی بستی میں اسے
وہ الگ ہٹ گیا آندھی کو اشارہ کر کے

آسمانوں کی طرف پھینک دیا ہے میں نے
چند مٹی کے چراغوں کو ستارہ کر کے

میں وہ دریا ہوں کہ ہر بوند بھنور ہے جس کی
تم نے اچھا ہی کیا مجھ سے کنارہ کر کے

منتظر ہوں کہ ستاروں کی ذرا آنکھ لگے
چاند کو چھت پر بلا لوں گا اشارہ کر کے

sad ghazal about life in urdu- latest urdu sad ghazal
sad ghazal about life in urdu- latest urdu sad ghazal

 

Leave a Comment