latest urdu sad ghazal- sad urdu poetry and ghazal

مجھے ڈر لگتا ہے لوگوں سے

مجھے ڈر لگتا ہے لوگوں سے
انکے قریب آنے سے
اچانک چھوڑ جانے سے
بہت سخت لہجوں سے
اور نرم مزاجوں سے
جان بن جانے سے
انجان ہو جانے سے
بہت خاص ہونے سے
بے حد عام ہو جانے سے
احسان کرنے سے
احسان جتانے سے
پہلے ہسنے سے
پھر خود ہی رولانے سے
ایک دن چھوڑ جانے سے
کبھی نا لوٹ آنے سے
مجھے ڈر لگتا ہے اب لوگوں سے..

__________________________

” محبت بےنیازی ہے

” محبت بےنیازی ہے “

ریاضی کے اصولوں میں
بلا کے آپ ماہر ہو
کہاں پرکیا گھٹانا ہے
کہاں کیا کچھ بڑھانا ہے
کہاں اعداد کے زمرے میں کیا تقسیم کرنا ہے
کہاں تفریق کرنا ہے
کہاں پہ ضرب آتی ہے
تمہیں یہ خوب آتا ہے
مگر یہ جو محبت ہے
یہاں یہ فن نہیں چلتا
ضرب تقسیم یا تفریق چاہت میں نہیں ہوتی
یہ دو کے قاعدے پے بس سدا آباد رہتی ہے
اور دو کے قاعدے میں تیسرے کو شرک کہتے ہیں
جو دو سے اک نکل جائے تو پیچھے کچھ نہیں بچتا
یہی ہے قاعدہ اس کا
یہی اسکی ریاضی ہے
محبت بے نیازی ہے

_________________________

بہت آسان ہے کَہنا

بہت آسان ہے کَہنا

مُحبّت ہَم بھی کَرتے ہیں۔۔۔!
مَگر مَطلَب مُحبّت کا
سَمجھ لَینا نَہیں آسان
مُحبّت پا کے کَھو دَینا
مُحبّت کَھو کے پا لَینا
یہ اُن لَوگُوں کے قِصّے ہیں
مُحبّت کے جَو مُجرِم ہیں
جَو مِل جانے پہ ہَنستے ہیں
بِچَھڑ جانے پہ رَوتے ہیں
!………….! سُنو !………….!
مُحبّت کَرنے والے تَو
بہت خامَوش ہَوتے ہیں
جَو قُربَت میں بھی جِیتے ہیں
جَو فُرقَت میں بھی جِیتے ہیں
نہ وہ فَریاد کَرتے ہیں
نہ وہ اَشکُوں کَو پِیتے ہیں
مُحبّت کے کِسی بھی لَفظ کا
چَرچا نَہیں کَرتے
وہ مَر کے بھی اَپنی چاہَت کَو
کَبھی رُسوا نَہیں کَرتے،
بہت آسان ہے کَہنا،
مُحبّت ہَم بھی کَرتے ہیں۔۔۔!

______________

ﮐﺘﻨﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﺍﺫﯾﺖ ﯾﮧ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ

ﮐﺘﻨﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﺍﺫﯾﺖ ﯾﮧ ﮔﻮﺍﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ
ﺩﻝ ﺳﮯ ﺍﺗﺮﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺍﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﻢ ﭘﮧ ﯾﮧ ﺁﺳﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ
ﺳﯿﮑﮫ ﻟﯿﺘﮯ ﺟﻮ ﮐﺴﯽ ﺩﺭﺩ ﮐﺎ ﭼﺎﺭﮦ ﮐﺮﻧﺎ
ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺳﺎﺗﮫ ﮔﺰﺍﺭﻭ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ
ﮨﻢ ﭘﮧ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﻨﺎﺭﮦ ﮐﺮﻧﺎ
ﮐﺘﻨﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﺟﻼﻧﺎ ﮐﺴﯽ ﺭﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﺮﺍﻍ
ﮐﺘﻨﺎ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﮯ ﮨﻮﺍﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﺮﻧﺎ
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﻢ ﺗﻮ ﭼﻠﻮ ﻣﺎﻥ ﮔﺌﮯ ﺳﮩﮧ ﺑﮭﯽ ﮔﺌﮯ
ﺍﯾﺴﺎ ﺑﺮﺗﺎﻭ ﻧﮧ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﮐﺮ

____________________

🍂___” ﻣﯿﮟ نے ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ.

🍂___” ﻣﯿﮟ نے ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ……
ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﻮﮞ
ﺩﻝ ﮐﯽ ﮔﮩﺮﺍﺋﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺁﺋﯽ
ﻓﺎﻧﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﭘﭽﮭﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﮭﺎﮔﯽ ﺗﮭﯽ .
ﻣﯿﮟ نے ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻏﻤﮕﯿﻦ ﮨﻮﮞ
ﺩﻝ ﭘﮭﺮ ﺑﻮﻝ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺲ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺗﮭﺎ
ﺧﺎﮎ ﮐﮯ ﭘﺘﻠﮯ ﺳﮯ ﺍﻣﯿﺪ ﻟﮕﺎﺅ
ﻣﯿﮟ نے ﭘﮭﺮ ﺁﻧﺴﻮ ﺑﮭﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ
ﻣﺠﮭﮯ ﻭﺍﻗﻊ ﺑﮩﺖ ﺩﺭﺩ ﮨﮯ
ﺩﻝ ﭘﮭﺮ ﭼﯿﺦ ﭘﮍﺍ
ﺟﺐ ﻣﻘﺼﺪ ﺣﯿﺎﺕ ﺳﮯ ﮨﭩﻮﮞ ﮔﯽ ﺗﻮ ﺩﺭﺩ ﮨﯽ ﭘﺎﺅﮞ ﮔﯽ . ﻣﯿﮟ نے ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﮐﮩﺎ !
ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﯾﻮﮞِ ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﮐﺎ ﭨﻮﭨﻨﺎ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ .
ﺩﻝ ﭘﮭﺮ ﺑﻮﻝ ﭘﮍﺍ
ﮐﺘﻨﯽ ﺑﮯﻭﻗﻮﻑ ﮨﻮﺗﻢ
ﺟﺘﻨﯽ ﺑﺎﺭ ﭨﻮﭦ ﮐﺮ ﺑﮑﮭﺮﻭﮞ ﮔﯽ ﺍﺗﻨﯽ ﮨﯽ ﺑﺎﺭ ﻣﻀﺒﻮﻃﯽ ﺳﮯ ﺍﭨﮭﻮﮞ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﮌﻭ ﮔﯽ .
ﻣﯿﮟ نے ﭘﮭﺮ ﮐﮩﺎ
ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺮﮮ ﺭﻭﺋﯿﮯ ﻣﺖ ﺩﮐﮭﺎ ﻣﺠﮭﮯ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﮨﻮﺗﯽ .
ﻣﺠﮫ ﭘﺮ ﺣﻘﯿﻘﺘﯿﮟ ﻣﻨﮑﺸﻒ ﻧﮧ ﮐﺮ .
ﺩﻝ ﭘﮭﺮ ﺑﻮﻝ ﭘﮍﺍ
ﺣﻘﯿﻘﺘﯿﮟ ﺗﻢ ﭘﺮ ﻣﻨﮑﺸﻒ ﻧﮧ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﭘﺘﮧ ﭼﻠﮯ ﮔﺎ
ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺧﯿﺮ ﺧﻮﺍﮦ ﮨﮯ ﻧﺎ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ .
ﻣﯿﮟ نے ﭘﮭﺮ ﮐﮩﺎ !
ﯾﺎ ﺭﺑﯽ !
ﻣﯿﮟ ﺑﮩﺖ ﺗﻨﮩﺎ ﭘﮍﮔﯽ ﮨﻮﮞ
ﺩﻝ ﺑﮯ ﺳﺎﺧﺘﮧ ﭘﮭﺮ ﺑﻮﻝ ﺍﭨﮭﺎ
ﺗﻢ ﮐﺐ ﺗﻨﮩﺎ ﮨﻮﮞ
ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﮐﺎ ﺧﺎﻟﻖ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﮯ .
💗ﻭﻧﺤﻦ ﺍﻗﺮﺏ ﺍﻟﯿﮧ ﻣﻦ ﺣﺒﻞ ﺍﻟﻮﺭﯾﺪ
” ﺗﯿﺮﯼ ﺷﮩﮧ ﺭﮒ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﺮﯾﺐ 💗
ﺁﺧﺮ ﺩﻝ ﻧﮯ ﮨﯽ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﺮﻟﯿﺎ .
ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ !
ﺍﻥ ﺳﺐ ﺍذﯾﺘﻮﮞ , ﺗﮑﻠﯿﻔﻮﮞ ” ﻭحشتوں ﺍﻭﺭ ﺗﻨﮩﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﺎﺗﯽ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﮞ
ﻣﯿﮟ نے ﺍﺳﮯ ﮐﮩﺎ !
ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻗﺮﺏ ,
ﺍﺳﮑﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﺫﺍﺋﻘﮧ ,
ﺍﺳﮑﯽ ﻣﮩﺮﺑﺎﻥ ﺁﻏﻮﺵ ,
ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺗﺤﺎﺷﺎ ﺳﮑﻮﻥ
ﺩﻝ ﺑﻮﻝ ﭘﮍﺍ
ﭘﮕﻠﯽ ﭘﮭﺮ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﺍ ﺑﮍﺍ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ
ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺳﺎﺧﺘﮧ ﮐﮭﻠﮑﮭﻼ ﭘﮍﯼ
ﺑﻠﮑﻞ ﯾﮧ ﺳﺐ
ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺏ ﮐﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺖ ﺍﻋﺰﺍﺯ ﮨﯿﮟ💗

latest urdu sad ghazal- sad urdu poetry and ghazal
latest urdu sad ghazal- sad urdu poetry and ghazal

Leave a Comment